خطرات سے خبردار CFDs پیچیدہ ٹولز ہیں اور لیوریج کی وجہ سے تیزی سے پیسہ کھو دینے کے اعلٰی خطرہ کے حامل ہوتے ہیں۔ اس فراہم کنندہ کے ساتھ CFDs ٹریڈنگ کرتے وقت 80% ریٹیل سرمایہ کار اکاؤنٹس پیسہ کھو دیتے ہیں۔ آپ کو اس پر غور کرنا چاہئے کہ آیا آپ سمجھتے ہیں کہ CFDs کس طرح کام کرتے ہیں اور کیا آپ اپنا پیسہ کھونے کا خطرہ مول لینے کے متحمل ہو سکتے ہیں۔
خطرات سے خبردار CFDs پیچیدہ ٹولز ہیں اور لیوریج کی وجہ سے تیزی سے پیسہ کھو دینے کے اعلٰی خطرہ کے حامل ہوتے ہیں۔ اس فراہم کنندہ کے ساتھ CFDs ٹریڈنگ کرتے وقت 80% ریٹیل سرمایہ کار اکاؤنٹس پیسہ کھو دیتے ہیں۔ آپ کو اس پر غور کرنا چاہئے کہ آیا آپ سمجھتے ہیں کہ CFDs کس طرح کام کرتے ہیں اور کیا آپ اپنا پیسہ کھونے کا خطرہ مول لینے کے متحمل ہو سکتے ہیں۔

فاریکس ٹریڈنگ اور سب سے عام استعمال ہونے والے فاریکس انڈیکیٹرز کے لئے حکمت عملیوں کو سمجھنا

آپ کا سرمایہ خطرہ سے دوچار ہے۔ ہم منفی بیلنس تحفظ کے ساتھ آپ کا احاطہ کرتے ہیں۔

ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

اپنی ٹریڈ کا منصوبہ بنائیں اور اپنے منصوبے کی ٹریڈ کریں

ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

ٹریڈنگ حکمت عملیوں کی مختلف اقسام

ٹریڈنگ حکمت عملیوں کو کیسے استعمال کریں

اسٹاکس یا فاریکس ٹریڈنگ کے لئے حکمت عملیاں

ماہر ٹریڈرز وسیع پیمانے پر تکنیکی تجزیہ کرنے کے فن میں صاحب علم ہوتے ہیں۔ ان کے پاس مختلف ٹریڈنگ حکمت عملیوں کے کام کرنے کا علم ہو سکتا ہے، لیکن وہ عام طور پر کچھ حکمت عملیوں پر تصفیہ کرتے ہیں جنہیں وہ مستقل بنیادوں پر کامیاب پاتے ہیں۔

آپ کو بھی اسی طرح سے ٹریڈنگ رسائی حاصل کرنی چاہئے۔ آپ کے ٹریڈز میں داخل اور ٹریڈز سے خارج ہوتے وقت اچھے مرتب کردہ قواعد کی پابندی کرنا آپ کو جذباتی فیصلے کرنے سے دور رکھتا ہے۔ یاد رکھیں، جذباتی فیصلے بڑے نقصانات لاتے ہیں کیونکہ ٹریڈنگ کبھی بھی ایک یقینی کھیل نہیں رہی ہے۔ یہاں تک کہ ٹریڈنگ حکمت عملیوں کو استعمال کرنے کے بعد بھی، نتائج کبھی کبھی آپ کے خلاف ہو سکتے ہیں۔

اپنی ٹریڈنگ حکمت عملی کو آزمائیں

اپنی حکمت عملی کو خطرے سے پاک ماحول میں آزمائیں

جب آپ کسی نئی حکمت عملی کو نافذ کرتے ہیں تو آپ کی کامیابی کے درجے مختلف ہوتے ہیں۔ اگر آپ نا آزمودہ حکمت عملی کے ساتھ اپنا اصلی پیسہ اس میں لگاتے ہیں، تو اس کے نتیجے میں نقصان ہو سکتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ڈیمو ماحول میں حکمت عملیوں کو آزمانا ایک بہترین نقطہ نظر ہے۔

ڈیمو اکاؤنٹ کے ساتھ ٹریڈنگ جذبات کے بڑھنے یا کم ہونے سے عاری ہو سکتی ہے جو اصلی پیسوں کے کھو دینے یا کمانے کے ساتھ آتے ہیں۔ تاہم، یہ جاننے کا اب بھی ایک بہترین طریقہ یہ ہے کہ کیا حکمت عملیاں حقیقی زندگی کے منظر نامے میں کام کر سکتی ہے۔

کچھ حکمت عملیان ایڈوانس ہوتی ہیں اور کچھ مشق کی ضرورت ہوتی ہے۔ ڈیمو ماحول میں ٹریڈ کرنے کا ایک اور فائدہ یہ ہے کہ آپ کو منڈی کی تاریخی حرکات تک رسائی حاصل ہوتی ہے۔ آپ حکمت عملی کا اطلاق کر سکتے ہیں اور دیکھ سکتے ہیں کہ کیا نتیجہ نکلے گا۔

ٹریڈز کی اقسام

فاریکس ٹریڈنگ کے مختلف انداز

ڈے ٹریڈنگ

ڈے ٹریڈنگ ایک ہی دن میں قلیل مدتی ٹریڈز کرنے کی ایک مشق ہے۔ عام طور پر، پوزیشنیں کچھ گھنٹوں تک کھلی رہتی ہیں اور رات بھر کے لئے کھلی نہیں چھوڑی جاتی ہیں۔ ڈے ٹریڈنگ کی بنیاد میں اتار چڑھاؤ والی منڈی سے فائدہ اٹھانا شامل ہوتا ہے جہاں قیمتیں مسلسل تبدیل ہوتی رہتی ہیں۔

آپ کی توجہ کو پرکھا جائے گا، کیونکہ یہ اعلٰی شدت کا حامل ٹریڈنگ انداز آپ سے منڈی کی مستقل نگرانی کرنے کا تقاضا کرتا ہے۔ فوری فیصلے کرنا، جیسے آیا پوزیشن کو بند کرنا یا کھلا چھوڑنا، اہم ہوگا۔

اسکیلپنگ ٹریڈنگ

اسکیلپنگ کی ڈے ٹریڈنگ کے ایک طریقہ کار کے طور پر درجہ بندی کی جا سکتی ہے۔ تاہم، وقت کا دورانیہ پانچ منٹ سے بھی کم رہ جاتا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ آپ کے پاس ایک منٹ یا پانچ منٹ کا چارٹ نظر میں ہوگا، اور اوسطاً پوزیشنز کچھ منٹوں یا سیکنڈز کے لئے تھام کر رکھی جاتی ہیں۔

اسکیلپرز مارکیٹ کی مستحکم حرکات کے حق میں ہوتے ہیں کیونکہ ان میں کم خطرہ ہوتا ہے۔ اس میں پورے دن کے لئے منڈی کی نگرانی کرنا پڑ سکتی ہے۔ اگر آپ اس حکمت عملی کا انتخاب کرتے ہیں، تو آپ کو خطرے والی ٹریڈز کو کم سے کم کرنا ہوگا، کیونکہ بہت سے چھوٹے چھوٹے منافع بخش آرڈرز سے بڑے سائز کا منافع حاصل کیا جاتا ہے۔ ایک نقصان میں آپ کی پوری پیشرفت کو ختم کر دینے کی صلاحیت موجود ہوتی ہے۔

پوزیشن ٹریڈنگ

اگر آپ پوزیشن ٹریڈر ہیں، تو آپ اسکیلپرز کی طرح قلیل مدتی نقطہ نظر اختیار نہیں کرتے ہیں۔ قیمت کی حرکات دنوں میں تبدیل ہوتی ہیں۔ لہذا یہ ایسی حکمت عملی ہے جس کے لئے آپ کو دن بھر منڈیوں کی نگرانی کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی ہے۔

پوزیشن ٹریڈنگ میں توقع یہ کی جاتی ہے کہ قیمتیں ایک مستحکم صعودی رجحان کے ساتھ بڑھیں گی۔ پوزیشن ٹریڈرز کو معمولی ڈبکیوں سے نمٹنے کے لئے استقامت اور لچک کی ضرورت ہوتی ہے۔ ٹریڈنگ کے اس انداز میں، صرف جامع بنیادی تجزیہ کرنا کافی نہیں ہوتا ہے۔ ٹریڈرز کو تکنیکی تجزیہ کی تکنیکوں کا بھی لازمی استعمال کرنا چاہئے۔

سوینگ ٹریڈنگ

سوینگ ٹریڈنگ ایک قلیل مدتی ٹریڈنگ حکمت عملی نہیں ہے، لیکن اس میں پوزیشن ٹریڈنگ اور ڈے ٹریڈنگ کی مماثلت پائی جاتی ہے۔ یہ پوزیشن ٹریڈنگ کی نسبت زیادہ اتار چڑھاؤ والی منڈیوں میں موزوں رہتی ہے، اور اسے "وسطی" ہونے کا کہا جاتا ہے۔ ایک ممکنہ فائدہ اٹھانے کے لئے آپ کو دراصل ایک مستحکم صعودی رجحان کی ضرورت نہیں ہوتی ہے۔

سوینگ ٹریڈنگ کے ساتھ، ایک دن یا کئی دنوں تک کی مدت کے لئے قیمت میں مستحکم تبدیلیاں تلاش کرنے پر زور دیا جاتا ہے۔ سوینگ ٹریڈرز کے لئے یہ ضروری ہوگا کہ پوزیشنز کو رات بھر کھلا چھوڑا جائے، لیکن آپ کو غیر متوقع واقعات جیسا کہ خبروں کی اہم تازہ کاریوں پر نظر رکھنی ہوگی۔

فاریکس ٹریڈنگ حکمت عملیاں

عام ٹریڈنگ حکمت عملیاں

بلیڈ رنر ٹریڈنگ

بلیڈ رنر ٹریڈ 20 مدتی قوت نمائی منتقلی کی اوسط (EMA) لائن کا استعمال کرتی ہے۔ اس کا اطلاق تمام مدتوں میں ہوتا ہے، لیکن بہت سے ٹریڈرز مختصر ٹائم فریمز جیسے 5 منٹ کے چارٹس کے لئے اس کا اطلاق کرتے ہیں۔ لکیر مرکزی چارٹ کے اندر ظاہر ہوتی ہے نہ کہ چارٹ سے ہٹ کر۔

بلیڈ رنر ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

اس حکمت عملی میں یہ دیکھنے کے لئے انتظار کرنا شامل ہے کہ آیا 20 مدتی EMA لکیر پرائس ایکشن لائن کو کاٹ کر نکل جاتی ہے، جو دو طرح سے ہو سکتا ہے۔ EMA لائن کے قیمت لائن سے کٹ کرنے کے بعد، اسے دوبارہ ٹیسٹ کرنے کے بعد بھی اس سے نیچے رہنا چاہئے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ منڈی نیچے کی جانب رجحان کرے گی۔ اگر EMA قیمت لائن سے کٹ کر جاتی ہے اور اسے دوبارہ ٹیسٹ کرنے کے بعد بھی یہ اس سے اوپر ہی رہتی ہے، تو منڈی کو اوپر کی جانب رجحان کو جاری رکھنی چاہئے۔

روزانہ فبونیکی پیوٹ ٹریڈ

یہ ٹریڈ انٹری پوائنٹس کو تلاش کرنے کے لئے محوری نقطوں اور فبونیکی ریٹریسمنٹس کو ایک ساتھ استعمال کرنے پر انحصار کرتی ہے۔ آپ اسے مستحکم سپورٹ اور مزاحمت ایریاز کا عین درست تعین کرنے کے لئے بھی استعمال کر سکتے ہیں۔

روزانہ فبونیکی پیوٹ ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

اس حکمت عملی میں محور سپورٹ لائن کے ساتھ فیبونیکی ریٹریسمنٹ لائنوں (32 %، 50% یا 62% لائنوں) کے درمیان ملاپ یا 'اکٹھے ہونا' کو تلاش کرنا شامل ہے۔ مثال کے طور پر، اگر آپ صعودی رجحان کے دوران ایک طویل پوزیشن میں داخل ہونا چاہتے ہیں، تو آپ منڈی میں داخل ہونے سے پہلے ملاپ کی تلاش کر سکتے ہیں۔ مضبوط سگنل کے لئے، تیزی کے رجحان کی تصدیق کی کینڈل اسٹک کا انتظار کرنا بہتر ہے۔ فبونیکی سب سے اعلٰی اشارہ دیتی ہے، اور محوری نقطہ اس کی سپورٹ کرتا ہے۔

بولی بینڈ باؤنس ٹریڈ

اس نہایت معروف حکمت عملی کے پیچھے سوچ یہ ہے کہ قیمتیں اپنی متوسط اوسط پر واپس آجائیں گی۔ اس کے لئے بولنگر بینڈز کے استعمال کی ضرورت ہوتی ہے اور اس کا اطلاق دائمی حد میں متحرک مستحکم منڈیوں میں ہوتا ہے۔

بولی بینڈ باؤنس ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

بولی بینڈ باؤنس حکمت عملی کو بالائی، وسطی اور زیریں بولنگر بینڈز پر غور کر کے عملدرآمد کیا جاتا ہے۔ آپ فرض کرتے ہیں کہ زیر غور اثاثہ سپورٹ (زیریں بینڈ) اور مزاحمت لیول (بالائی بینڈ) کے اندر رہے گا۔ وسطی بینڈ عام طور پر 20 دنوں کی منتقلی کی اوسط ہے۔ اس کے بعد آپ پڑتال کریں کہ کیا قیمت مزاحمت یا سپورٹ کی طرف بڑھتی ہے، پھر وسطی پر پلٹ آتی ہے۔

اس حکمت عملی کے مطابق اس وقت خریدا جائے کہ جب قیمتیں زیریں بینڈ کے قریب رجحان کر رہی ہوں اس توقع کے ساتھ کہ وہ وسط کے تئیں بڑھیں گی۔ فروخت کرنے کی تب سفارش کی جاتی ہے جب قیمتیں بالائی بینڈ پر اس توقع کے ساتھ پہنچ جاتی ہیں کہ وہ اب گریں گی۔ اگر قیمتیں وسط پر جائے بغیر "بینڈ پر چلنے" کا انتخاب کرتی ہیں تو ٹریڈ نقصان کا سبب سکتی ہے۔

فاریکس اوور لیپنگ فبونیکی ٹریڈ

اگر آپ فبونیکی ریٹریسمنٹ لائنوں کے کام کرنے کا اچھا علم رکھتے ہیں، تو لاگو کرنے کے لئے یہ ایک کم چیلنج والی حکمت عملی ہوگی۔ اس مفصل حکمت عملی کا استعمال کرنے والے ٹریڈرز اکثر اس پر بھروسہ کرتے ہیں اور اسے خصوصی طور پر استعمال کرتے ہیں۔ دیگر انڈیکیٹرز، جیسے پیوٹ لائنوں کے ساتھ مل کر، یہ مضبوط سگنل فراہم کرتی ہے۔

اوور لیپنگ فبونیکی ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

آپ اس حکمت عملی کو کسی بھی منڈی کی مستحکم حرکت کے دوران لاگو کر سکتے ہیں، خواہ یہ تیزی یا مندے کا رجحان ہو۔ آئیے فرض کریں کہ منڈی اوپر کی جانب رجحان اختیار کر رہی ہے۔ اس معاملے میں، خیال یہ ہوتا ہے کہ دو فبونیکی ریٹریسمنٹ لائنوں کا نقشہ بنایا جائے۔ آپ تین لہروں کی شناخت کر کے آغاز کرتے ہیں؛ ایک اوپری رجحان (پہلی لہر) جس کے بعد ریٹریسمنٹ (دوسری لہر) آتی ہے اور آخر میں اوپر کی جانب رجحان (تیسری لہر) کا ظاہر ہونا۔

آپ صعودی رجحان کے زیریں سے رجحان کے بالائی تک ایک ایک فبونیکی کو بناتے ہیں (مزاحمت کی لائن تک سب سے کم وک اپ یا تیسری لہر کے سب سے اوپر) اس کے بعد آپ دوسرے فبونیکی کو دوسری لہر کے نچلے حصے سے اونچی ترین اونچ پر کھینچتے ہیں۔ اگلا مرحلہ دو الگ الگ فبوناکسیس کی لکیروں کے درمیان ملاپ یا اوپر چھا جانے کی نشاندہی کرنا ہے۔ صعودی رجحان کے دوران، ملاپ کا لیول سپورٹ کی ایک مضبوط لائن کی نشاندہی کرتا ہے۔ نزولی رجحان میں، ملاپ مزاحمت کی ایک مضبوط لائن کی موجودگی کی تصدیق کرتا ہے۔

لندن ہیمر ٹریڈ

اس پر عملدرآمد کرنا کافی آسان ہے، کیونکہ یہ لندن مارکیٹ کے کھلی ہونے کے دوران قیمت کے دوران اتار چڑھاؤ والی قیمت کی حرکات کے گرد گھومتا ہے یا یہ قریب ہو کر بن جاتا ہے۔ مزید ٹریڈرز کے فعال ہونے کی بنیاد پر منڈی میں اتار چڑھاؤ بڑھ جاتا ہے۔ بہت سے ٹریڈرز گولڈ کی منڈی میں ٹریڈنگ کرتے ہوئے اسے استعمال کرتے ہیں۔

لندن ہیمر ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

جب لندن مارکیٹ کھلتی ہے، تو آپ ہیمر/ہتھوڑے کی تلاش شروع کر دیتے ہیں۔ یہ جاپانی کینڈل اسٹک پیٹرن ہے جس کی خصوصیات میں لمبی نچلی بتی (جسم کی لمبائی سے دوگنی)، مختصر اصلی جسم، اور کم یا کوئی بالائی بتی نہ ہونا شامل ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ فروخت کار دورانیے کے پہلے نصف کے دوران قیمتوں کو کمی کی طرف لے جاتے ہیں، صرف خریداروں کے لئے کم قیمتوں کو مسترد کرنا جو محض قیمت کے تھوڑے سے فرق سے کھلاؤ سے آگے قیمت کو تحریک دیتی ہیں۔ یہ اس بات کی عکاسی کر سکتا ہے کہ منڈی ایک مقررہ دن میں کیسا طرزعمل دکھائے گی۔ آپ اسے سپورٹ اور مزاحمت کے ساتھ یکجا کر کے مستحکم سگنل حاصل کرتے ہیں۔

فاریکس فریکٹل ٹریڈ کرنا

آپ پلٹاؤ کی نشاندہی کرنے اور بہت اتار چڑھاؤ یا منتشر منڈیوں میں اس کے وجود کی تصدیق کے لئے فریکٹلز کا استعمال کرتے ہیں۔ فریکٹلز سوینگ بالائی یا سونگ زیریں پر ظاہر ہوتے ہیں

فاریکس فریکٹل ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

فریکٹل پیٹرن ایک وسطی کینڈل اسٹک یا بار پر مشتمل ہوتا ہے جو دو دوسری کینڈلز سے گھرا ہوتا ہے۔ اگر یہ مندے کا رجحان فریکٹل ہے، تو درمیانی کینڈل اونچی ترین اونچ ہے اور اس کو دو نچلی اونچ پوائنٹس سے جوڑا جاتا ہے۔ اسے اس طرح تصور کیا جا سکتا ہے کہ ایک اونچا پہاڑ جس کے اطراف دو چھوٹی پہاڑیاں ہیں جو آس پاس کی دوسری پہاڑیوں سے زیادہ اونچی ہیں۔

تیزی کا رجحان فریکٹل کے لئے، درمیانی کینڈل نچلی ترین نیچ ہے اور اس سے ایک حوض/نالہ سا بنتا ہے کیونکہ یہ دو اونچے نیچ پوائنٹس سے جڑا ہوتا ہے۔ آپ ایک پلٹاؤ کے وجود کی تصدیق کرنے کے لئے فریکٹل کے ساتھ ساتھ 'ایلیگیٹر انڈیکیٹر' کا بھی استعمال کر سکتے ہیں۔

فاریکس دوہری اسٹاکسٹک ٹریڈ

یہ حکمت عملی زیادہ تر بڑے کرنسی کے جوڑوں کی ٹریڈنگ کرنے پر لاگو ہوتی ہے لیکن دوسرے اثاثوں پر بھی اس کا اطلاق ہوتا ہے۔ اس کا مقصد یہ ظاہر کرنا ہے کہ رجحان کے سب سے زیادہ کب پلٹنے کا امکان ہے۔ ابتدائی خفیہ اشارے کے ساتھ ہی، آپ اپنی پوزیشن تبدیل کرنے کے لئے تیار ہو جاتے ہیں۔

فاریکس دوہری اسٹاکسٹک ٹریڈ کیا ہے؟

یہ حکمت عملی بیشتر گھنٹہ وار چارٹس پر لاگو ہوتی ہے، لیکن روزانہ چارٹس کے ساتھ بھی کام کرے گی۔ آپ کو بس ایک تیز اسٹاکسٹک اوسیلیٹر اور ایک سست اسٹاکسٹک اوسیلیٹر تشکیل دینے کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس کے بعد، آپ ان دو اسٹاکسٹکس کا موازنہ کرتے ہیں اور ان پوزیشنز میں داخل ہوتے ہیں جب ایک چارٹ زیادہ فروخت شدہ مارکیٹ (80 سے زائد) دکھا رہا ہے جبکہ دوسرا زیادہ فروخت شدہ مارکیٹ (20 سے کم) کو ظاہر کرتا ہے۔ یہ سنگل دیتا ہے کہ ہو سکتا ہے کہ پلٹاؤ آ رہا ہو۔ حکمت عملی کو دوسرے تکنیکی اشاروں کے ساتھ مل کر استعمال کرنا ضروری ہے۔

پاپ 'این' اسٹاپ ٹریڈ

پاپ 'این' اسٹاپ ٹریڈ آپ کو قیمت کے تنگ حد سے اچانک باہر نکلنے سے فائدہ اٹھانے کی اجازت دیتا ہے۔ یہاں بریک آؤٹ یعنی باہر نکلنے کے ہاتھ سے نکل جانے اور ٹریڈ میں دیر سے داخل ہونے کا خطرہ رہتا ہے۔ قیمت کا بریک آؤٹ کوئی بھی خبر جاری ہونے، والیم کے بڑھنے، یا منڈی کے کھلنے پر ہو سکتا ہے۔

پاپ 'این' اسٹاپ ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

پاپ 'این' اسٹاپ حکمت عملی کے ساتھ، آپ بڑے مارجن "یکدم باہر نکلنا" کے ذریعے قیمت کے اپنی قیمت حد کو توڑ کر آگے بڑھنے کی تلاش کرتے ہیں۔ اس کے بعد ایک چھوٹا سا اسٹاپ آتا ہے اور پھر ایک مضبوط صعودی رجحان جاری رہ سکتا ہے۔ "یہ یکدم باہر نکلتا ہے اور پھر رک جاتا ہے۔" مختصر وقفے کے بعد، اس بات کی ضمانت نہیں ہے کہ قیمت بڑھتی رہے گی، لہذا یہ نہایت ضروری ہے کہ آپ دوسرے سگنلز پر نظر رکھیں جو مندے کا رجحان کی تصدیق کرتے ہیں۔ نیز، ایک پن بار تشکیل کی طرح مسترد بار کینڈل پیٹرنز پر بھی نگاہ رکھیں۔ آپ تنگ حد کے آرڈرز دیتے ہیں اور منافع لینے والے لیول بھی، کیونکہ قیمت لیول کا تیزی سے ختم ہونا آسان ہے۔

ڈراپ 'این' اسٹاپ ٹریڈ

ڈراپ 'این' اسٹاپ ٹریڈ، پاپ 'این' اسٹاپ ٹریڈ کا الٹ ہے۔ اس کا اطلاق قیمت کے ایک حد سے نیچے نکل جانے کی صورت میں ہوتا ہے، جس میں مندے کا پھوٹ پڑنا کہا جاتا ہے۔

ڈراپ 'این' اسٹاپ ٹریڈنگ حکمت عملی کیا ہے؟

ڈراپ 'این' اسٹاپ اس وقت ہوتا ہے جب قیمت اپنی حد سے نیچے چلی جاتی ہے، اس کے بعد معمولی قیمت ایکشن کے ساتھ ایک مختصر وقفہ آتا ہے، اور پھر یہ عام طور پر نیچے کی طرف ایک واضح سمت میں جاتا ہے۔ ٹریڈرز کے لئے تیزی سے کاروائی کرنا بالکل ضروری ہے، لیکن آپ مندے کا رجحان کو مسترد کرنے والے بار کا انتظار کرنے کا انتخاب کر سکتے ہیں جو سگنل کی تصدیق کرتا ہے۔

مصنوعی فاریکس ٹریڈنگ

ہمارے ڈیمو اکاؤنٹ پر حکمت عملیوں کو آزمانا

فاریکس سیمولیٹر

ہمارے ڈیمو اکاؤنٹ پر ٹریڈنگ سیمولیٹر

ہمارے مفت ڈیمو اکاؤنٹ کے ساتھ مختلف ٹریڈنگ حکمت عملیوں کو آزمائیں

FXTM کلائنٹس کو خطرے سے پاک ماحول میں حکمت عملی کو آزمانے کا موقع فراہم کرتا ہے۔ ہمارے فاریکس سیمولیٹر کے ساتھ، آپ کو اپنے سرمایہ کا خطرہ مول لینے کی ضرورت نہیں جب تک آپ کو اپنی کامیابی سے ٹریڈز کرنے کی صلاحیت پر اعتماد نہیں ہو جاتا۔

اگرچہ FXTM ڈیمو اکاؤنٹ ایک سیمولیٹر کا استعمال کرتا ہے، لیکن آپ عام منڈی کے حالات میں ٹریڈنگ کر رہے ہوں گے۔ قیمتوں کی حرکات حقیقی ہیں اور انڈیکیٹرز جن کے بارے میں آپ نے اوپر سیکھا ہے قابل اطلاق ہیں۔ آپ مصنوعی پیسوں سے ٹریڈنگ کر رہے ہوں گے، لیکن حقیقی منڈی کی شرائط کے تحت۔

ڈیمو اکاؤنٹ کھولیں

*CFDs پیچیدہ انسٹرومنٹس ہیں اور لیوریج کی وجہ سے تیزی سے پیسہ کھو دینے کے انتہائی خطرے کے ساتھ آتے ہیں۔ 89% ریٹیل انویسٹر اکاؤنٹس اس فراہم کنندہ کے ساتھ CFDs ٹریڈنگ کرتے وقت پیسہ کھو دیتے ہیں۔ آپ کو اس پر غور کرنا چاہئے کہ آیا آپ سمجھتے ہیں کہ CFDs کس طرح کام کرتے ہیں اور کیا آپ اپنا پیسہ کھونے کا انتہائی خطرہ مول لینے کے متحمل ہو سکتے ہیں۔

ٹریڈنگ سیمولیٹر

ہمارے ڈیمو اکاؤنٹ پر CFDs ٹریڈنگ

CDFs "فرق کیلئے معاہدے" ہیں۔ جب آپ CFDs ٹریڈ کرتے ہیں، تو آپ بنیادی اثاثوں، اشیائے تجارت یا حصص، یا بڑے اشاریوں پر ملکیت اختیار نہیں کرتے ہیں۔ انہیں ٹریڈ کرنے کے لئے عام طور پر ایک بڑے سائز کے سرمائے کی ضرورت ہوتی ہے۔ تاہم، جب آپ CFDs ٹریڈ کرتے ہیں، تو آپ صرف ان کی قیمتوں میں تبدیلیوں پر قیاس آرائی کرتے ہیں۔ آپ معمولی سرمائے سے آغاز کر سکتے ہیں، اور لیوریج کی طاقت کا استعمال کر سکتے ہیں۔

ہمارے ٹریڈنگ سیمولیٹر اور فاریکس ڈیمو اکاؤنٹس کے فوائد:

  • تیز رجسٹریشن اور نئے اکاؤنٹس کی تصدیق۔
  • کم/تنگ اسپریڈز
  • لچکدار لیوریج جس میں آپ کے تجربے یا علم کی بنیاد پر اضافہ کیا جا سکتا ہے*
  • آرڈرز پر بہت تیز عملدرآمد
  • سواپ فری اکاؤنٹس *جو ان افراد کے لئے موزوں ہیں جو سود نہیں دیتے یا قبول نہیں کرتے ہیں

FXTM لچکدار لیوریج کو فروغ دیتا ہے* تاکہ آپ کو مسابقتی برتری فراہم کی جا سکے۔

ہمارے لچکدار لیوریج کے ساتھ مسابقتی برتری حاصل کریں جس کی آپ کو ضرورت ہے۔

ہمارے ڈیمو اکاؤنٹس کے بارے میں مزید جانیں

فاریکس انڈیکیٹرز

فاریکس ٹریڈنگ کے لئے اہم انڈیکیٹرز

MACD انڈیکیٹر

منتقلی کی اوسط ارتکاز انحراف

یہ سب سے زیادہ استعمال ہونے والے انڈیکیٹرز میں سے ایک ہے کیونکہ اسے سمجھنا آسان ہے، اور ٹریڈرز کو اس بارے میں معلومات فراہم کرتا ہے کہ قیمت حرکت میں تیزی کا رجحان یا مندے کا رجحان ہے، اور اس کی حرکت کی قوت کے بارے میں بھی بتاتا ہے۔ MACD دورانیہ اور مومینٹم کے بارے میں بھی معلومات فراہم کرتا ہے۔

MACD انڈیکیٹر کو کیسے استعمال کریں

MACD انڈیکیٹر دو لائنوں پر مشتمل ہوتا ہے اور وقت کے محور کے برعکس ایک ہسٹوگرام تیار کیا گیا ہے۔ پہلے، ہمارے پاس MACD لائن ہے جسے 12 دن قوت نمائی منتقلی کی اوسط (تیز) اور 26 دن EMA (سست) کے مابین فرق تلاش کر کے حاصل کیا جاتا ہے۔ سگنل لائن MACD کی 9 دن کی سادہ منتقلی کی اوسط ہے۔ اس کا رنگ عام طور پر سرخ ہوتا ہے اور MACD کے اوپر ظاہر ہوتا ہے۔ ہسٹوگرام دو لائنوں کے مابین فاصلے کی نمائندگی کرتا ہے۔

کراس اوورز

جب MACD لائن سگنل لائن کے اوپر سے تجاوز کرتی ہے، تو ٹریڈرز اندازہ لگاتے ہیں کہ صعودی رجحان کے پیدا ہونے کا امکان ہے، اور کی جانے والی کارروائی اثاثہ خریدنا ہے۔ اگر سگنل لائن MACD لائن کے نیچے سے عبور کرتا ہے، اشارہ یہ ہے کہ نیچے کی سمت بن سکتی ہے، اور اس وجہ سے آپ کو فروخت کرنی چاہئے۔

MACD بنیادی لائن کے نیچے منفی قدر کی طرف بھی جا سکتا ہے، اور یہ نزولی رجحان تشکیل پانے کے امکان کا اشارہ کرتا ہے۔

انحراف

قیمت لائن MACD سے منحرف ہو سکتی ہے، جو تجویز کرتی ہے کہ رجحان پلٹ سکتا ہے۔

تمثیلی SAR

تمثیلی اسٹاپ اور ریورس

تمثیلی SAR ایک "رجحان کی پیروی کرنیوالا انڈیکیٹر" ہے۔ یہ آپ کو یہ نتیجہ اخذ کرنے میں مدد کر سکتا ہے کہ کب خریدنا یا فروخت کرنا ہے۔ انڈیکیٹر قیمت بارز کے اوپر نقطوں کے سلسلے کے طور پر ظاہر ہوتا ہے۔ ڈے ٹریڈرز مختصر مدت کے مومینٹم کو ظاہر کرنے کے لئے اس کا استعمال کرتے ہیں۔

تمثیلی SAR کا کیسے استعمال کریں

تمثیلی SAR کو استعمال کرنا کافی آسان ہے، یہاں تک کہ مبتدین کے لئے بھی۔ تاہم، نوٹ کریں کہ دوسرے انڈیکیٹرز کی طرح یہ بھی جعلی سگنل تیار کر سکتا ہے۔ جب نقطے قیمت لائن سے اوپر ہوں، تو صعودی رجحان پر نظر رکھیں کیونکہ اس کی تشکیل کا امکان ہو سکتا ہے۔ نقطے صرف قیمت کی حرکت کو واضح کرتے ہیں۔ نقطے ممکنہ داخلوں اور اخراج کو ظاہر کرنے کے لئے قیمت کے ٹاپ سے لائن کے نیچے تک ادلہ بدلہ کرتے ہیں۔

احتمالی ارتعاش کنندہ

اسٹاکسٹک اوسیلیٹر انڈیکیٹر

اسٹاکسٹک اوسیلیٹر انڈیکیٹر آپ کے ٹریڈر کے ٹول بکس میں ایک لازمی رکھنے والا ٹول ہے۔ یہ ایک مومینٹم انڈیکیٹر ہے جسے کسی اثاثہ کے بند ہونے کی قیمت اور کسی مخصوص مدت کے دوران اس کی قیمت کی حد کا موازنہ کر کے حاصل کیا جاتا ہے۔ یہ روزانہ چارٹ جیسے زیادہ ٹائم فریموں کے ساتھ بہتر نتائج پیدا کرتا ہے۔

اسٹاکسٹک اوسیلیٹر کا کیسے استعمال کریں

اس کے چارٹ میں دو لائنیں سست %D اور تیز %K ہیں۔ ڈیفالٹ پیچھے دیکھنے کی مدت 14 دن ہے، لیکن آپ انڈیکیٹر کی حساسیت کو بڑھانے یا کم کرنے کے لئے اس پیرامیٹر کو مختلف بنا سکتے ہیں۔ اسٹاکسٹک اوسیلیٹر آپ کو بتاتا ہے کہ کب ٹریڈ میں داخل ہونا ہے۔ اگرچہ اسے مومینٹم اور ولاسٹی کا سراغ رکھنے کے لئے تیار کیا گیا تھا، اب یہ بھی نشاندہی کرتا ہے کہ آیا کیا منڈی زیادہ خریداری کردہ یا زیادہ فروخت کردہ ہے۔

آپ 80 لائن اور 20 لائن کو دیکھتے ہیں۔ اگر %D اور %K لائنیں 80نشان کو عبور کرتی ہیں، تو اثاثہ زیادہ خریدا گیا ہے۔ کچھ خریدار فروخت شروع کر سکتے ہیں اور منافع لے سکتے ہیں، جس سے رجحان پلٹ سکتا ہے۔ اب اگر دونوں لائنیں 20 نشان سے نیچے آ جاتی ہیں، تو اثاثہ زیادہ فروخت شدہ ہے، اور مزید ٹریڈرز خریدنے کا انتخاب کریں گے، قیمتوں کو بڑھائیں گے۔

متناسب قوت اشاریہ

متناسب قوت اشاریہ انڈیکیٹر

RSI اسٹاکسٹک اوسیلیٹر کے ساتھ اسی فنکشن کا اشتراک کرتا ہے کیونکہ یہ آپ کو زیادہ خریداری کردہ یا زیادہ فروخت شدہ منڈی کی نشاندہی کرنے میں مدد کر سکتا ہے۔ یہ حد کا پابند مومینٹم اوسیلیٹر ہے جسے ایک مخصوص مدت کے دوران اوسط نقصان کے ساتھ اوسط منافع کی قیمتوں کا موازنہ کر کے حاصل کیا جاتا ہے۔ یہ قیمت میں تبدیلی کی شرح کا بھی پتہ لگاتا ہے۔

متناسب قوت اشاریہ کو کیسے استعمال کریں

سراغ رکھنے کے لئے صرف ایک ہی لائن ہے، اور 70 لائن کو عبور کرنے پر زیادہ خریداری کا سگنل یا اس کے 30 سے نیچے جانے کی صورت میں ایک زیادہ فروخت ہونے کا سگنل پیدا کرتا ہے۔ RSI صعودی رجحان کی تشکیل دکھا سکتا ہے اگر اس کی RSI قدر کم پوزیشن سے بڑھتی ہے، مرکزی لائن (50) کو عبور کرتی ہے اور 70نشان پر آ جاتی ہے۔

اگر یہ کسی بلند مقام سے 50 مرکزی لائن سے پیچھے 30 نشان کی طرف جاتی ہے، تو یہ مندے کا رجحان خط حرکت کی تصدیق کر سکتی ہے۔ چڑھتے رجحان کے دوران، RSI قدر 60 حد سے اوپر ٹھہر سکتی ہے جس کے ساتھ 40-50 زون سپورٹ کے طور پر کام کرتا ہے۔ مندے کا رجحان منڈی میں، RSI قدر 10-60 کی حد میں رہتی ہے، اور 50-60 زون مزاحمت کا کام کرتا ہے۔

بولنگر بینڈز

بولنگر بینڈز انڈیکیٹر

جان بولنگر کے تیار کردہ چارٹ انڈیکیٹر جسے ٹریڈرز منڈی کے اتار چڑھاؤ کی پیمائش کرنے کے لئے استعمال کرتے ہیں۔ آپ اسے منڈی کے حد بندی میں ہونے کے دوران استعمال کرتے ہیں۔

بولنگر چارٹ کو پڑھنا کافی آسان ہے کیونکہ یہ معیاری انحراف کی دو لائنوں پر مشتمل ہوتا ہے جس میں ایک عام منتقلی کی اوسط لائن شامل ہوتی ہے۔ بیرونی لائنیں منڈی کے اتار چڑھاؤ پر انحصار کرتے ہوئے سکڑ (ایک دوسرے کی طرف بڑھنا) یا پھیل (دور ہٹ) سکتی ہیں۔

بولنگر بینڈز کو کیسے استعمال کریں

بولنگر بینڈ کو استعمال کرنے کا پہلا طریقہ یہ تعین کرنا ہے کہ باہر کی لکیریں پھیل یا سکڑ رہی ہیں۔ مثال کے طور پر، اگر قیمت کی لکیر اوپر جاتی ہے، تو لائنیں زیادہ اتار چڑھاؤ ظاہر کرتے ہوئے پھیل سکتی ہیں۔ بیرونی بینڈ سپورٹ اور مزاحمت کی لائنوں کے طور پر بھی کام کر سکتے ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ قیمت کی لائن ان کے اندر ہی رہتی ہے۔

"بولنگر باؤنس" نامی مظہر نوٹ کرتا ہے کہ قیمتیں کبھی حرکی سطحوں کو نہیں توڑتی ہیں بلکہ مرکز کی طرف راغب ہوتی ہیں۔ تاہم، بعض اوقات قیمت صرف اسی جگہ پر رہنے کے لئے بالائی یا زیریں بینڈ پر گرنے کا رجحان کرتی ہیں۔ اسے "بینڈ کا چلنا پھرنا" کہتے ہیں۔

اچی موکو ہنکو ہیؤ

اچی موکو ہنکو ہیؤ انڈیکیٹر

اس انڈیکیٹر کو ایک جاپانی اخبار کے مصنف نے تیار کیا تھا، اور یہ کئی اشارے کا مجموعہ ہے جس کا مطلب ہے کہ یہ ٹریڈرز کو وہ تمام معلومات دیتا ہے جس کی انہیں ایک ہی نظر میں دیکھنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ یہ تعجب کی بات نہیں ہے کہ اس میں 5 تک لائنیں شامل ہیں۔ چونکہ یہ متعدد لائنوں سے مل کر بنا ہوا ہے، نئے ٹریڈرز کے لئے اسے پڑھنا مشکل ہو سکتا ہے۔

اچی موکو ہنکو ہیؤ کو کیسے استعمال کریں

اس کی کچھ لائنوں میں کیجن سین اور ٹینکین سین شامل ہیں جسے مختلف ماضی میں دیکھی جانے والی مدتوں کی سب سے زیادہ قیمتوں اور کم قیمتوں کی اوسط کے ذریعہ اخذ کیا جاتا ہے۔ مثال کے طور پر، ٹینکین سین لائن 26 کی لک بیک مدت رکھتی ہے۔ سینکاؤ اسپین اے، ایک اور لائن، کیجن سین اور ٹینکین سین کی اوسط ہے۔

تکنیکیت میں جائے بغیر، بات یہ کہ یہ انڈیکیٹر ٹریڈرز کی مزاحمت اور سپورٹ لیول کا تعین کرنے میں مدد کرتا ہے۔ یہ قیمت کے مومینٹم، ممکنہ پلٹاؤ کو ظاہر کر سکتا ہے اور ٹریڈرز کی نقصان اسٹاپ لگانے میں مدد کر سکتا ہے۔

آپ کا سرمایہ خطرہ سے دوچار ہے۔ ہم منفی بیلنس تحفظ کے ساتھ آپ کا احاطہ کرتے ہیں۔

Scroll Top